چین میں ویکسین کی خوراک ایک ارب کا ہندسہ پار کر گئی ہے

فوٹو بشکریہ عرب نیوز

بیجنگ: صحت حکام نے اتوار کے روز بتایا کہ چین میں زیر انتظام کوویڈ-19 ٹیکوں کی تعداد ایک ارب سے زیادہ ہو گئی ہے جو دنیا بھر میں دی جانے والی خوراکوں میں سے ایک تہائی سے زیادہ ہے۔

سرکاری ذرائع سے اے ایف پی کے اعداد و شمار کے مطابق قومی صحت کمیشن کی جانب سے یہ اعلان جمعہ کے روز عالمی سطح پر لگائے جانے والے شاٹس کی تعداد ڈھائی ارب سے تجاوز کرنے کے بعد کیا گیا ہے۔ یہ واضح نہیں ہے کہ چین کی آبادی کے کتنے فیصد حصہ کو اب تک ٹیکہ لگایا گیا ہے لیکن وائرس کے خلاف کامیاب جنگ کے بعد اس کی ویکسینیشن مہم کا سست آغاز ہوا جس سے جھپٹنے کی فوری ضرورت کا کوئی احساس نہیں رہا۔ 

شفافیت کی کمی اور پچھلے ویکسین اسکینڈلز بھی رہائشیوں میں مزاحمت کا باعث بنے ہیں۔ حکام نے رواں ماہ کے آخر تک ملک کے تقریبا 1.4 ارب افراد میں سے 40 فیصد کو مکمل طور پر ٹیکہ لگانے کا ایک اہم ہدف مقرر کیا ہے۔ کچھ صوبے لوگوں کو ٹیکے لگانے کے لئے مفت ویکسین پیش کر رہے ہیں۔ وسطی انہوئی صوبے کے رہائشیوں کو مفت انڈے دیئے گئے ہیں جبکہ بیجنگ میں رہنے والے کچھ لوگوں کو شاپنگ کوپن ملے ہیں۔ جنوبی شہر گوانگ ژو میں وائرس کی زیادہ متعدی ڈیلٹا قسم کی حالیہ وباء نے بھی بہت سے لوگوں کے لیے جاگنے کا کام کیا ہے جو ہچکچا رہے تھے۔

چین میں اتوار کے روز کورونا وائرس کے 23 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ ملک میں چار مشروط طور پر منظور شدہ ویکسین ہیں، جن کی شائع شدہ افادیت کی شرح فائزر بائیو این ٹیک اور ماڈرنا کی جانب سے حریف ٹیکوں سے پیچھے ہے، جن کی کامیابی کی شرح بالترتیب 95 فیصد اور 94 فیصد ہے۔ چین کے سینوویک نے اس سے قبل کہا تھا کہ برازیل میں اس کے شاٹ کے ٹرائلز سے انفیکشن کی روک تھام میں تقریباً 50 فیصد اور طبی مداخلت کی ضرورت والے معاملات کی روک تھام میں 80 فیصد افادیت ظاہر ہوئی ہے۔

سینوفارم کے دو ٹیکوں کی افادیت کی شرح بالترتیب 79 فیصد اور 72 فیصد ہے جبکہ کینسینو کی مجموعی افادیت 28 دن کے بعد 65 فیصد ہے۔ ان میں سے بہت سے دو خوراکوں کی ضرورت ہے. سرکاری خبر رساں ادارے ژنہوا نے اپریل میں خبر دی تھی کہ چین رواں سال تین ارب سے زائد ویکسین کی خوراک تیار کرے گا۔ صحت حکام نے یہ نہیں بتایا کہ چین “ہرڈ” کی قوت مدافعت تک کب پہنچے گا یا اس کی ویکسین کی خوراک کا کتنا تناسب بیرون ملک فروخت کیا جائے گا۔

اردو پبلشر کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں