کیا آپ کوویڈ-19 ویکسینز کو مکس کر سکتے ہیں اور میچ کر سکتے ہیں؟

فوٹو بشکریہ عرب نیوز

کیا آپ دو مختلف کوویڈ-19 (کورونا وائرس) ویکسینز کو مکس کر سکتے ہیں اور میچ کر سکتے ہیں؟ یہ ممکنہ طور پر محفوظ اور مؤثر ہے، لیکن محققین اب بھی یقینی طور پر ڈیٹا اکٹھا کر رہے ہیں۔ 

عالمی ادارہ صحت کے ویکسین یونٹ کی ڈائریکٹر ڈاکٹر کیٹ اوبرائن نے کہا کہ دنیا بھر میں مجاز کوویڈ-19 شاٹس آپ کے مدافعتی نظام کو متحرک کرنے کے لئے ڈیزائن کیے گئے ہیں تاکہ وائرس سے لڑنے والے اینٹی باڈیز تیار کیے جا سکیں، اگرچہ ان کا ایسا کرنے کا طریقہ مختلف ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ویکسین کس طرح کام کرتی ہے اس کے بنیادی اصولوں کی بنیاد پر ہم یہ ضرور سمجھتے ہیں کہ مکس اینڈ میچ کے طریقہ کار کام کرنے والے ہیں۔ برطانیہ کی آکسفورڈ یونیورسٹی کے سائنسدان اسٹرازینکا، ماڈرنا، نوواکس اور فائزر بائیو این ٹیک کی تیار کردہ دو خوراکوں والی کوویڈ-19 ویکسین کے امتزاج کی جانچ کر رہے ہیں۔ اسپین اور جرمنی میں بھی چھوٹے ٹرائل جاری ہیں۔

اوبرائن نے کہا کہ ہمیں واقعی ان (ویکسین) کے ہر امتزاج میں ثبوت حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔ اب تک، محدود اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ ایک اسٹرازینیکا شاٹ جس کے بعد فائزر شاٹ محفوظ اور موثر ہے۔ یہ امتزاج درد اور سردی جیسے عارضی ضمنی اثرات کے قدرے زیادہ امکان کے ساتھ بھی آتا ہے۔ برطانیہ کی یونیورسٹی آف وارک کے وائرولوجسٹ لارنس ینگ نے کہا کہ اس کی وجہ یہ ہوسکتی ہے کہ مختلف اقسام کے ٹیکوں کو ملانے سے اکثر مدافعتی ردعمل مضبوط ہوسکتا ہے۔ 

بعض جگہوں پر صحت کے حکام پہلے ہی منتخب حالات میں اختلاط کا مشورہ دیتے ہیں۔ اسٹرازینکا ویکسین کے انتہائی نایاب خون کے لوتھڑوں سے منسلک ہونے کے بعد جرمنی، فرانس اور اسپین سمیت بہت سے یورپی ممالک نے ان لوگوں کی سفارش کی جنہوں نے اسے پہلی خوراک کے طور پر حاصل کیا تھا اس کی بجائے دوسری خوراک کے طور پر فائزر یا ماڈرنا شاٹ حاصل کرتے ہیں۔ برطانیہ اور کینیڈا میں حکام کا کہنا ہے کہ اگر ممکن ہو تو لوگوں کو اپنی دوسری خوراک کے لیے ایک ہی ویکسین حاصل کرنے کا مقصد رکھنا چاہیے۔ اگر انہیں اسٹرازینیکا کو ان کا پہلا شاٹ ملا ہے تو انہیں مشورہ دیا جاتا ہے کہ وہ ایک اور ویکسین صرف اس صورت میں لیں جب ان کے پاس خون کے لوتھڑے یا دیگر حالات کی تاریخ ہو جس سے انہیں لوتھڑے کا زیادہ خطرہ ہو۔

اردو پبلشر کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں