اسرائیلی کارگو جہاز پر ہونے والے دھماکے میں ایران کا ممکنہ ہاتھ

Urdu Publisher
|فوٹو: بشکریہ گوگل arabnews

انڈپینڈنٹ کے مطابق اسرائیلی وزیر دفاع بینی گینٹز نے کہا ہے کہ ان کے ’ابتدائی جائزوں‘ سے پتہ چلتا ہے کہ مشرق وسطیٰ کے پانیوں میں اسرائیلی مال بردار بحری جہاز پر ہونے والے دھماکے کا ذمہ دار ایران ہے۔
سرائیلی وزیر دفاع بینی گینٹز نے کہا ہے کہ ان کے ’ابتدائی جائزوں‘ سے پتہ چلتا ہے کہ مشرق وسطیٰ کے پانیوں میں اسرائیلی مال بردار بحری جہاز پر ہونے والے دھماکے کا ذمہ دار ایران ہے۔

انہوں نے ایک ٹیلی ویژن انٹرویو میں کہا: ’ایران اسرائیل کے بنیادی ڈھانچے اور شہریوں پر حملہ کرنا چاہتا ہے۔‘ اسرائیلی وزیر نے مزید کہا کہ دھماکے کے وقت جہاز کا مقام نسبتاً ایران کے قریب تھا جس سے یہ اندازہ ہوتا ہے کہ ’یہ ایرانیوں کا ہی کام تھا۔‘
جمعے کی صبح عمان کی سمندری حدود میں اسرائیلی کارگو جہاز ’ایم وی ہیلیوس رے‘ پر ایک پراسرار دھماکہ ہوا تھا جس کی اصل وجہ ابھی تک معلوم نہیں ہوسکی۔ تاہم اس واقعے نے خطے میں سمندری تحفظ کے بارے میں خدشات کو جنم دیا ہے۔

اسرائیلی کارگو جہاز پر یہ دھماکہ شام میں عراقی سرحد کے قریب ایرانی حمایت یافتہ عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں پر امریکی فوج کے فضائی حملوں کے چند گھنٹوں بعد ہوا تھا۔

اس خبر کو بھی پر پڑھیں : ایران اور اسرائیل دشمن کیوں ہیں؟

جہازوں کی نگرانی کرنے والے سیٹلائیٹ ڈیٹا کے مطابق دھماکے کے وقت اسرائیلی جہاز صبح چھ بجے کے قریب بحر عرب کے قریب تھا جس نے اچانک آبنائے ہرمز کا رخ کیا۔ ویب سائٹ کے مطابق یہ جہاز سنگاپور جا رہا تھا۔

اسرائیلی کارگو جہاز پر ہونے والے دھماکے میں ایران کا ممکنہ ہاتھ” ایک تبصرہ

اردو پبلشر کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں