فوجی بغاوت کے بعد میانمار میں فیس بک عارضی طور پر بلاک

فوجی بغاوت کے بعد میانمار میں فیس بک عارضی طور پر بلاک
Image Source-Google|Image by- nsdesign

بدھ کے روز انٹرنیٹ مانیٹرنگ سروس نیٹ بلاکس کی ایک رپورٹ کے مطابق ، رواں ہفتے کے شروع میں ملک کی فوج نے بغاوت میں اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد میانمار میں سوشل میڈیا کی کمپنیوں کی اپنی اور فیس بک اور دیگر خدمات کو عارضی طور پر روک دیا گیا ہے۔

اس خبر کو بھی پر پڑھیں :میانمار میں بغاوت سے ملک میں موجود 600،000 روہنگیا مسلمانوں پر حملے ہو سکتے ہیں .اقوام متحدہ کی تشویش

نیٹ بلاکس نے کہا کہ سرکاری طور پر چلنے والی انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے والی کمپنی ایم پی ٹی اور ٹیلی مواصلات کمپنی ٹیلی نار میانمار نے فیس بک اور متعدد ایپس پر پابندی عائد کی ہے جس میں کمپنی کے پاس فوٹو سروس سروس انسٹاگرام اور میسجنگ سروس واٹس ایپ اور فیس بک میسنجر شامل ہیں۔ ایم پی ٹی نے فوری طور پر کوئی جواب نہیں دیا ہے۔

اردو پبلشر کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں